Home / مضامین / مہنگائی اور ٹریفک کے مسائل…ترقی یافتہ ملکوں میں سائیکل کی سواری مقبول ہونے لگی

مہنگائی اور ٹریفک کے مسائل…ترقی یافتہ ملکوں میں سائیکل کی سواری مقبول ہونے لگی

Cycling in developed countries
شہریاراحمد
ترقی یافتہ ملکوں کے لوگوں نے حالیہ مہنگائی کی وجہ سے سائیکل سواری کوآمدورفت کا ایک اہم ذریعہ بنا لیاہے۔ایک رپورٹ کے مطابق لندن میں گھر سے آفس جانے کے لیے سائیکل استعمال کرنے والوں کی تعداد 77 ہزارسے بڑھ کر ایک لاکھ 61 ہزار ہو گئی ہے۔لندن کے بدترین ٹریفک جام اور مہنگی پارکنگ فیس سے بچنے کےلیےشہریوں میں سائیکل سواری مقبولیت حاصل کرتی جا رہی ہے۔اس سلسلے میں’ہیکنی’شہرسب پرسبقت لے گیاہے.مشرقی لندن میں واقع ہیکنی کے ہرسات رہائشیوں میں سے ایک رہائشی یا تقریبا15 فیصد شہری سائیکل کو سواری کے طور پر استعمال کر رہے ہیں، جبکہ کار استعمال کرنے والوں کی تعداد 12 فیصد بتائی گئی ہے۔یہ لوگ روز مرہ کے لباس میں ملبوس عام سے انداز میں گھر سے آفس اور آفس سے گھر کی جانب سائیکل چلاتے نظر آتے ہیں۔یہاں کی سڑکوں پر سائیکل سواروں کے لیے مخصوص قطارسست رفتاراورمحفوظ ہے.یہی وجہ ہے کہ یہاں ہرعمر کے لوگ سائیکل سواری کرتے نظر آتے ہیں۔
ہیکنی کو نوجوانوں کا شہر بھی کہا جاتا ہے، جہاں سائیکل سواری کو یہ نوجوان فیشن کی طرح اختیار کر رہے ہیں۔
لندن کے مئیر بورس جانسن نے لندن میں ٹریفک کے مسائل پر قابو پانے کے لیے’پبلک سائیکل شئیرنگ اسکیم’ شروع کی ہے۔
یہ سہولت لندن شہر میں بورس سائیکل کے نام سے جانی جاتی ہے۔مقامی انتظامیہ کی جانب سےشہر میں مصروف سڑکوں کے کنارے یہ سائیکل اسٹینڈ لگائے گئے ہیں، جبکہ اسٹینڈ پر لگی خود کار مشین سے بنک کارڈ کے ذریعے کوئی بھی شخص گھنٹے، دن اور ہفتے کا پاس بنوا کرسائیکل کرائے پر حاصل کر سکتا ہے۔ پہلے 30 منٹ کے لیے کرایہ فری ہے جبکہ یومیہ دو پونڈ کرایہ مقرر ہے۔ہیکنی کے بعدازلنگٹن شہرسائیکل سواروں کی تعدادکے اعتبارسےدوسرے نمبرپرہے۔

کے بارے میں ویب ڈیسک

بھی چیک

Toba-Tek-Singh

Toba Tek Singh جاویدحفیظ انگریزحکمرانوں نے1890ء کے قریب ساندل بار اور نیلی بار میں نہریں …

جواب دیجئے

%d bloggers like this: